facebookgoogle plustwitteryoutube

ذکر  دل کے لیےایسا ہی ہے    جیسے پانی  مچھلی  کے لیے۔ مچھلی جب پانی سے جدا کر دی   جاۓ  تو وہ کیونکر زندہ  رہ سکتی ہے؟  دین   نے اس بات  کی ترغیب  دی ہے کہ مسلمان   اپنے رب سے  اپنا تعلق استوار  رکھے تاکہ  اس کا   ضمیر بیدار   رہے،  اس کا نفس  صاف   ستھرا رہے اور اس کادل پاک رہے،    اور وہ اللہ سے توفیق  ومدد  کا طالب  رہے۔ اسی   وجہ  سے   قرآن کریم   اور سنتِ مطہرہ میں ایسی چیزیں  آئی ہیں  جو  اللہ کا ذکر کثرت سے کرنے کی دعوت دیتی   ہیں۔  اور اس نے ہر وقت اور ہر حال  میں ذکر   کو مشروع  قرار  دیا ہے۔

ذکر دل کے لیےایسا ہی ہے جیسے پانی مچھلی کے لیے۔ مچھلی جب پانی سے جدا کر دی جاۓ تو وہ کیونکر زندہ رہ سکتی ہے؟ دین نے اس بات کی ترغیب دی ہے کہ مسلمان اپنے رب سے اپنا تعلق استوار رکھے تاکہ اس کا ضمیر بیدار رہے، اس کا نفس صاف ...

نماز  دین کا ستون     اور شہادتین  کے بعد اس کا ایک اہم  رکن ہے۔ بندہ سے قیامت   کے دن سب سے  پہلے نماز ہی کے متعلق پوچھ گچھ   ہوگی۔   یہ آخری  وصیت ہے  جس کی وصیت نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے مرتے وقت اپنی امت  کو کی۔ بلکہ صحابۂ کرام  اس شخص   کو منافقین میں سے شمار  کرتے تھے   جو  جماعت کی نماز میں نہیں  آتا تھا۔     نماز کی اہمیت  کی سب سے بڑی   دلیل   یہ ہے کہ   یہ  ساتوں آسمانوں  کے اوپر   بلا کسی   واسطے کے فرض  ہوئی ہے۔

نماز دین کا ستون اور شہادتین کے بعد اس کا ایک اہم رکن ہے۔ بندہ سے قیامت کے دن سب سے پہلے نماز ہی کے متعلق پوچھ گچھ ہوگی۔ یہ آخری وصیت ہے جس کی وصیت نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے مرتے وقت اپنی امت کو کی۔ بلکہ صحابۂ کرام اس شخص کو مناف ...

زکوة کیا ہے؟ "ان صفائی اور ان کو پاک کرنے کے لئے ان کے مال میں سے خیرات لے لو". زکوة کے بارے میں مزید جاننے اور چوپائے جانوروں کی زکوٰۃ۔

زکوة کیا ہے؟ "ان صفائی اور ان کو پاک کرنے کے لئے ان کے مال میں سے خیرات لے لو". زکوة کے بارے میں مزید جاننے اور چوپائے جانوروں کی زکوٰۃ۔

اسلام   اعتدال    وتوازن   اور عدل  واستقامت کا  دین ہے۔   قرآن وسنت میں بہت سی  ایسی  آیات  واحادیث  ہیں   جو اسلام کی   وسطیت  اور اس کے افراط   وتفریط  سے پاک  متوازن    ومعتدل ہونے پر دلالت  کرتی ہیں۔   ایسی  وسطیت جس میں کوئی  انحراف   وکجی  نہیں ہے۔ اس لیے کہ یہی  وہ حق   ہے  جو آسمان سے اترا ہے۔  لہذا  وہ غلو  وتقصیر  اور افراط  وتفریط سے پاک  ہے۔ نہ اس میں انتہا پسندی  ہے  اور نہ ا  ضاعت   وبربادی  اور نہ  سستی   ودلیری۔

اسلام اعتدال وتوازن اور عدل واستقامت کا دین ہے۔ قرآن وسنت میں بہت سی ایسی آیات واحادیث ہیں جو اسلام کی وسطیت اور اس کے افراط وتفریط سے پاک متوازن ومعتدل ہونے پر دلالت کرتی ہیں۔ ایسی وسطیت جس میں کوئی انحراف وکجی نہی ...